top of page

نعت کی خوشبو گھر گھر پھیلے

Naat Academy Naat Lyrics Naat Channel-Naat-Lyrics-Islamic-Poetry-Naat-Education-Sufism.png

منقبتِ خال المؤمنین حضرت سیدنا امیر معاویہ بن ابوسفیان رضی اللہ عنھما

تمام عاشقانِ رسُولﷺ کو ٢٢ رَجَبُ المُرَجَّب صَحابیِ رسُولﷺ، رازدارِ رسُولﷺ، مُحِبِّ رسُولﷺ و آلِ رسُولﷺ، سُلطانِ اِسلام، کاتبِ وَحِی، اللہ عزّوجل کے دین کے مددگار، خالُ المُسلِمِین، اَمِیرُ المُومِنِین میرے آقا حضرتِ سَیِّدُنا اَبُو عَبدُ الرّحمٰن اَمیرِ مُعاوِیه بِن ابُو سُفیان رَضِیَ اللہُ تَعالٰی عَنہُم اَجمَعِین کا مُقدّس و مُتَبَرِّک عُرس شریف بُہت بُہت بُہت مُبارک ہو


الحَمدُ للہِ عَزَّوَجَل مَیں حضرتِ سَیِّدُنا مَولٰی عَلِی کَرَّمَ اللہُ تَعَالٰی وَجہَهُ الکَرِیم سے مُحبّت کرتا ہُوں اور حضرتِ سَیِّدُنا اَمیرِ مُعاوِیه رَضِیَ ﷲُ تَعالٰی عَنهُ کا ادب کرتا ہُوں اور اِن دونوں رَضِیَ اللہُ تَعالٰی عَنہُم اَجمَعِین سے سچّی مُحبّت و عقیدت رکھتا ہُوں اور حضرتِ سَیِّدُنا اَمِیرِ مُعاوِیه رَضِیَ ﷲُ تَعالٰی عَنهُ کو، خود کو اور تمام مُومِنِین کو حضرتِ سَیِّدُنا مَولٰی عَلِی شیرِ خُدا کَرَّمَ اللہُ تَعَالٰی وَجہَهُ الکَرِیم کا غُلام سمجھتا ہُوں

 





صحبتِ سرکار ہے تقدیرِ خال المؤمنین اہل سنت کرتے ہیں توقیرِ خال المؤمنین

پیکرِ رشد و ہدایت کا نظارہ ہوگیا آگئی جب سامنے تصویرِ خال المؤمنین

طعن و تشنیع ان کے بارے کام ہے فجار کا نار میں لے جائے گی تحقیرِ خال المؤمنین

ہے قرابت ان کو حاصل سرورِ کونین کی اس لیے ہے خلد میں جاگیرِ خال المؤمنین

سرحدِ اسلام کو وسعت ملی بے انتہا جب بنامِ حق چلی شمشیرِ خال المؤمنین

کاتبِ وحئ الٰہی اولِ بزمِ ملوک اس حوالے سے بھی ہے تشہیرِ خال المؤمنین

گوشۂ افکارِ فاضل میں نہ ہو ظلمت کوئی اس کو نور آگیں رکھے تنویرِ خال المؤمنین








فاضل میسوری
 





تو عظمتوں کا شہسوار حضرتِ معاویہ سلام تجھ پہ بے شمار حضرتِ معاویہ


تو شانِ رزم گاہ تھا تو تیغ تھا حضور کی ظہورِ زورِ کردگار حضرتِ معاویہ

وہ وار تیرا کیا ہوا شگاف سینوں میں پڑا خلا تھا ایک آر پار حضرتِ معاویہ

نہ تاب تھی ، جگر پھٹا وہ سر اُڑا یہ تن چِھدا ہوا تھا تو جو حملہ وار حضرتِ معاویہ

ہزار زخم کھا کے بھی لڑا تو قہر ڈھا دیا غضب کا تھا تو جانثار حضرتِ معاویہ

نقاب اہلِ کفر کے تکبّر و غرور کا کیا تھا تونے تار تار حضرتِ معاویہ

گلِ قدس کی نکہتِ شرف ترے وجود میں ہے بے خزاں تری بہار حضرتِ معاویہ

ترے کمال کو کوئی ولی پہنچ سکا نہیں ولایتوں کا اعتبار حضرتِ معاویہ

رموزِ کن فکاں کا تھا تو محرمِ ابد نشاں ہر ایک شے تھی آشکار حضرتِ معاویہ

علی کی تجھ سے اور تری علی سے صلح ہو گئی دلِ عدو ہے خار خار حضرتِ معاویہ

علی علی ہے مرتبہ علی کا کیا کروں بیاں مجھے تو تم سے بھی ہے پیار حضرتِ معاویہ

سلامِ رازئ شکستہ کیجیے قبول اب اے شاہِ عظمت و وقار حضرتِ معاویہ

 

کتابِ رُشد کا چمکتا حاشیہ معاویہ خلافتِ محمّدی کا تکملہ معاویہ

بتا رہی ہے عظمتِ سعادتِ قلم مجھے ہے کاتبِ خطابتِ الٰہیہ معاویہ

صحابیت پہ آپ کی گواہ لشکرِ علی نزاعِ دین کا نہیں ہے مسئلہ معاویہ

ہوئی خطاۓ اجتہاد جس طرح یہ آپ سے اِسی طریق پر چلیں تھیں عائشہ ، معاویہ

قصاصِ حضرتِ غنی کا تھا یہ ماجرا فقط کہاں امارتوں کا تھا مطالبہ معاویہ

عقیدہ اپنا ہے یہی بحکمِ شرعِ مصطفیٰ علی کے حق اصابتوں کا فیصلہ معاویہ

نہیں ہے جائز اِس سے یہ تبرّا آپ پر کریں یہ بھونکتے ہوۓ سگانِ ہاویہ معاویہ

خطوطِ نسبت و شرف میں کجروی کہیں نہیں ترے نسب کا پاک صاف دائرہ معاویہ

تُو بعدِ ذاتِ ” بابِ علم ” حق پہ تھا اِسی لیے “حسن” نے صاف کر دیا معاملہ معاویہ

کسے مجال آنکھ اُٹھا کے دیکھ پاۓ دین کو کسی کو تیرے ہوتے تھا نہ حوصلہ معاویہ

ہزار سازشیں تو کفر کر چکا ہے آج تک نہ کر سکا مگر ترا مقابلہ معاویہ

تری نیابتوں کا کچھ نہ رکھ سکا یزید پاس خفا نہ ہو گی تجھ سے ذاتِ فاطمہ معاویہ

تبرّا تیری ذات پر کرے گا بد نصیب جو تو خیر پر نہ ہو گا اُس کا خاتمہ معاویہ

فقیہِ ہند نے ترے عدو کو کر دیا تباہ گواہ اِس پہ ہے فتاویٰ رضویہ معاویہ

عجب ہے لطف رازئِ سخن کے اِس کلام میں ہوۓ ردیف و قافیہ معاویہ معاویہ

از میرزا امجد رازی


 



مُسَـلَّـمُ الثُّبـوت ہـے ، فضیلتِ معـاویہ عیاں ہے شمس کی طرح کرامتِ معاویہ

وہ جس سے روٹھ جاٸیں تو رسول اُس سے روٹھ جاٸیں نبی سـے اِس طـرح کی ہے قَـرابتِ معاویہ

خداکےفضل سے ملی، اُنھیں وہ عظمتِ گراں کـوٸ نہ تول پاۓ گا ، جـلالتِ معـاویہ

نسَب میں ہیں تجلیاں قبیلۂ رسول کی قُـریشیت سـے بڑھ گٸ شرافتِ معاویہ

ہیں انکی خواہرِ عزیز، جملہ مومنوں کی ماں بـڑی شَـرَف مـاٰب ہـے ، نـَجـابتِ معاویہ

گُلِ حیات اُن کا ہےصحابیت سے عطر بیز اِسی لئے ہـے نَو بہ نو ، نَـضـارتِ معاویہ

تمام مومنوں کے آپ پیارے ماموں جان ہیں ہمیں بہت عـزیز ہـے ، یہ نسبتِ معاویہ

حَسَن کےدستِ پاک سے بنے خلیفۂ رسول رضــاۓ آل مـصطـفٰی ، خــلافـتِ معاویہ

معاویہ کـے پیار سے ہمارا بیڑا پار ہے گنــاہ بخشـواۓگی ، شـفـاعت معاویہ

اُنھیں کوئ برا کہے تو اُسکـے منہ میں خـاک و آگ نہ سن سکیں گے ہم کبھی اہانتِ معاویہ

جوعاشق رسول ہیں وہ ان سے پیار کرتے ہیں فـقـط منافقوں کو ہـے ، عداوتِ معاویہ

یزیدکےفریب کا، معاویہ سےکیا حساب نبـھا نہ پایا وہ شـقی ، نیـابتِ مـعـاویہ

وہ کرگیے نصیحتیں، اصولِ حق پہ چلنے کی پسـر کے فعلِ بد سے ہے ، بـراءَتِ معـاویہ

ہر ایک بغض و کینہ سے، حیات انکی پاک ہے سدا ہو عـــزت علی ، اِرادت معـــاویہ

جہانِ علم و فضل کے وہ دونوں آفتاب ہیں نہ کـم ہے طلعت علی، نہ طلعت معــاویہ

بڑوں کـےاختلاف میں، پڑیں نہ ہم، یہی ہے خیر ہو دل میں الفت علی، عقیدت معاویہ

وہ نجمِ برجِ رُشد ہیں وہ ہادٸِ رہِ ارم فـلاح دوجـہاں بـنی ، قـیـادتِ مـعـاویہ

مِلااُنھیں بھی افتخار، وحٸِ پاک لکھنے کا ہــے لازوال تــا ابـد ، کتـابتِ مـعــاویہ

کہاہـےعادل وثِقَہ ، محدثین نـے اُنھیں حدیث میں ہـے مستنـد ، روایتِ معـاویہ

اُنھیـں دعا نبی نـے دی ہـے مہـدی اور ہـادی کی ہر ایک شک سے دور ہے ہدایتِ معاویہ

تبرکات مصطفٰی، لحد کےواسطے چنے عـقیـدے کاچـراغ ہـے ، وصـیّتِ معاویہ

کشادہ انکا دستِ پاک آسمان کی طرح مثـالِ بـارشِ رواں ، سـخـاوتِ معاویہ

صحابہ،تابعین ہوں، کہ اولیاءِ دین ہوں سب اہلِ حق نے مانی ہے امامتِ معاویہ

نہ رافضی نہ خارجی، فقط ہیں سنی معتدل یزیـد سـے جـدائ اور رَفاقتِ معاویہ

ہراک عـدو پہ لعنتیں، خـدا کی اور رسـول کی ہـے باعـث رضـاۓ رب، اطاعتِ معـاویہ

یہ گوہرحیات ہے، یہ توشۂ نجات ہے دلِ فریدی کو ملی ، محـبتِ معـاویہ




فریدی مصباحی



 

رسول دوسرا کے جاں نثار ہیں معاویہ نگاہِ مصطفیٰ سے ذی وقار ہیں معاویہ


کہے جو اُن کو دشمنِ علی وہ مستند نہیں جنابِ حضرتِ علی کے یار ہیں معاویہ

ہیں مومنین اُن کا ذکرِ پاک سُن کے باغ باغ جو رافضی ہیں اُن کو مثلِ خار ہیں معاویہ

کتابتِ کلامِ پاک اُن کا مشغلہ رہا یوں اُمتِ نبی میں شان دار ہیں معاویہ

جو اہلِ نار کے گلے کا طوق اُن کا نام ہے تو اہلِ حق کے قلب کا قرار ہیں معاویہ

میسر اُن کو صحبتِ رسولِ دوجہاں رہی ہدایتِ ابد کا اک منار ہیں معاویہ

حکومت اُن کو بھی خدا نے کی عطا تو خوب کی جہاد میں بھی ایک شہسوار ہیں معاویہ

اُنہی کے دورِ سلطنت میں شام تک عرب گئے یوں دینِ حق کے واسطے بہار ہیں معاویہ

تُو ازہر اُن کا نام لے ادب سے احترام سے تِرے کلام کے لیے وقار ہیں معاویہ

محمد اویس ازہر مدنی

 

یہ مرتبہ ، ہیں کاتبِ ام الکتاب آپ اصحابِ مصطفیٰ میں حسیں دُرِ ناب آپ

اس واسطے ہم آپ کی عزت پہ ہیں نثار مولاٰ حسن کا قدر شناس انتخاب آپ

فیضِ تبرکاتِ نبی قبر تک ملا ایسے فداے ذاتِ رسالت مآب آپ

اصحابی کالنجوم پہ ایمان ہے مرا میرے لیے معاویہ عزت مآب آپ

دونوں میں تھا خلوص و محبت کا سلسلہ لاریب ہیں رفیقِ شہِ بوتراب آپ

ہمشیرہ آپ کی ہیں سبھی مومنوں کی ماں ہیں امتِ حضور کے ماموں جناب آپ

اس دعوے پر دلیل ہے سرکار کی دعا بے مثل و باکمال ہیں اور لاجواب آپ

عزت ہر اک صحابی کی کرتے رہے اگر ہرگز نہ ہوں گے حشر میں پُراضطراب آپ

حضرت معاویہ کی مُشاہد جو مدح کی دونوں جہاں میں ہوں گے بہت کامیاب آپ

عرض نمودہ: محمد حسین مشاہد رضوی
 








ہے بے گناہ وہ صاحبِ کردار معاویہ طاعن تیرا ہے نار کا حقدار معاویہاوّل مَلِک ہے کاتبِ سرکار معاویہ ہے باکمال صاحب و سالار معاویہقائل تیرے فضائل و اوصافِ پاک کے تھے بو تراب حیدرِ کرّار معاویہ

یا رب بنا دے ھادیُ و مَھدی معاویہ تم کو دعائے مصطفٰی سردار معاویہ

محبوبِ جبرائِیل و خدا اور مجتبٰی یہ جان تم پہ ہو فدا سو بار معاویہ

پھر منتظر ہے شام نظر کا معاویہ مڑ مڑ کہ دیکھتا ہے تیری تلوار معاویہ

اہلِ سُنَن نے کر کے دفاعِ معاویہ اہلِ فتن پہ کر دی ہے یلغار معاویہ

حبِّ علی کی مے رہی دارم کے ہاتھ میں پی کر تیرے ہی جام سے سرشار معاویہ

دارم حزیں کو دولت حلم و عمل عطا یہ خاکسار تیرا طلبگار معاویہ

وقار حبیب دارم

 

صــــفّین و جَــــمل میں آکر لے شــــیرِ خـــــدا سـے ٹکر* تھی کس کی جرّاتِ عالیہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

تھی شیرِ خــــــدا کی خـلافت بےخوف کی پھر بھی بغـــاوت* اور وہ بھی علی الاعلانیہ سرکار ۔۔۔۔ امیر ۔۔۔۔ مُعاویہ

لینے کو قـــصاصِ عــــثماں نکلی شــــمـــــــشیرِ ایمــاں در سلطنتِ اسلامیہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

حـــــاصل وہ پرِ پرواز کرے خود جس پہ بلندی ناز کرے منارہِ قــــصرِ فــضــائیہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

اسلام کــا اوّل بادشـــــاہ بنیــــادِ بســـــاطِ کــج کــــلاہ آغازِ صــفِ ســــطانیہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

ایمــــان و عـــمل کا جــــوہر ســــرحد پہ کـــفر کی آکر کھنیچا ہے جس نے حاشیہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

ہو جــس پہ نبــی کو بھـروسہ دیں جــس کے ہاتھ کــو بوسہ کــــل آیـــــاتِ قـــــرآنیہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔۔ مُعاویہ

قــرآن و حـدیث کی حکمت تھے جــس کی زباں کی زینت یہ نـــــغمـــاتِ الــــہامیہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

وہ نجـــــمِ ہدٰی، آفـــاق پناہ جــــزدانِ مـــصحـــفِ لا الٰہ پـــروازِ پـــرِ الــــــہامیہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

قنــدیلِ صــبحِ دوام ہـے تو پرنور چــــراغِ شـــام ہـے تو اے شــمعِ شــبِ انتــاکیہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

لیـــکر جـــبریل کــا شـــہپر بر مُـــصحــف رُوئـــے پیـــــمبر لــکھا ہـے جـس نے اداریہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

پُـــرنور، نجوم و مــہر و مــہ ہر وقـــت رہـے چــشمِ بر راہ اے رونقِ بزمِ عـــــالیہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

وہ تیری دہاڑ تھی، شیر عـرب تاریخِ وقـت کا جس کے سبب تبـــدیل ہوا جغــــرافیہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

طــــوفـــان کی صورت آیا پر کــوئی بــدل نہ پایا تری فکر و نظر کا زاویہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

دیتے ہی تیــــری دہائی ہو پل میں پگھل کر رائی چـــٹانِ کــــوہِ ہمـــــالیہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

گـستــــاخ ہُــوا جــــو تیــــرا دشـــمن ہـے وہ بیشــک میرا مردود و لــعین و ناریہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

گستـــاخ بنے وہ ترا تب لعنت میں گھرے بندہ جب اور عقـل کا نکلے دیوالیہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

تو آئـــے جـــو ہندوســـتان مـیں ہــر ہنـــدی, تـــیری شــان میں پڑھے خـــطبہِ اســـتقبالیہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

مدحـــت کـا مـــنوّر آنچل تاریک لــــحد میں مری کل بن جائے ثوابِ جـاریہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

مـــحتاج ہیں تیــری مدحت کے لاریب ! اک شاعـــرِ فــطرت کے یہ بحر و ردیف و قافیہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

پـرویؔز ! – امــــیرِ شـــــام تــــرا کھـــاتا ہے لــے کـــر نام تـــــیرا خــیراتِ قــصیدہِ لامیہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

بائـــــیس رجب کـے صدقے بائیـــــس مساجد کا ہـے عطـّار کا عـــزمِ عــالیہ سرکار ۔۔۔ امیر ۔۔۔۔۔ مُعاویہ

=================

* یہاں جراتِ رندانہ بیان ہے، دشمنی یا عداوت کا اظہار نہیں بلکہ اجتہاد کے پختہ یقین کا ذکر مقصود ہے =================

نتیجہِ فکر :- پرویؔز اشرفی احمدآبادی

 

ہیں صحابی نبی سیدی معاویہ جنتی جنتی سیدی معاویہ خوب ہیں وصف بھی سیدی معاویہ سچے کاتب وحی سیدی معاویہ ہر صحابی نبی جنتی جنتی کہتی امت سبھی سیدی معاویہ کی خدا سے دعا ہادی و مہدی کر اک دعا وہ ہوئی سیدی معاویہ جانثاروں میں وہ میرے آقا کے ہیں خوب قربت ملی سیدی معاویہ حسن مولا کی خدمت سعادت سے پھر ملی تم کو خوشی سیدی معاویہ اپنی حارث ہےرٹ بھی تو حق بھی یہی جنتی جنتی سیدی معاویہ

محمد علی حارث

 

دین کے ہر گوشے میں جلوت امیرِ شامؓ کی مصطفیٰؐ سے ملتی ہے سنّت امیرِ شامؓ کیجس تخیل کو ملی نسبت امیرِ شامؓ کی وہ بیاں کرتی رہی عظمت امیرِ شامؓ کیاہلِ بیتِ مصطفیٰؐ سے ہیں قرابت داریاں خوب ہے اصحابؓ سے قربت امیرِ شامؓ کی

چھا گئی رُشد و ہدایت کے رُخِ گلزار پر مُشک سے بھی بالا تر نگہت امیرِ شامؓ کی

خالِ امت کے سجا سر ، کاتبِ قرآں کا تاج دینِ برحق کو ملی خدمت امیرِ شامؓ کی

صاحبِ دل گیر کے ہے واسطے رازِ شفاء نسبتِ شیرِ خداؓ ، چاہت امیرِ شامؓ کی

فرق ‘عائش’ پڑ نہیں سکتا کسی تنقید سے تم کرو دل کھول کر مدحت امیرِ شامؓ کی

✍?عائشه صدیقی عائش

 





بے شک امیر معاویہ صحب رسول باغ احمد کے ہیں وہ بھی ایک پھولراضی رب ہے ان سے ,راضی رب سے وہ یہ رضا ہے دین کا اصل الاصولانکے گھوڑوں کے سموں سے جو اٹھے رب کو پیاری لگتی ہے بیشک وہ دھول

ان کا ذکر خیر تم کرتےرہو رب کرے گا تم سے نیکی یہ قبول

جنکو بھائی کہہ رے ہیں مرتضی ان کو دشمن کہنا کتنا ہے فضول

جن سے صلح ہے علی حسنین کی ان سے صلح کر لو سارے ہی قبول

وہ کاتب وحیء کتاب کبریا جن کو مانیں معتبر رب کے رسول

ان سے الفت رکھتے ہیں مومن سبھی ان کو گالی دیتے ہیں جاھل جہول

وہ ہدایت کے ستارے ہیں قمر اس حدیث مصطفی کو نہ تو بھول

کلام محمد جعفر قمر سیالوی فیصل آباد




83 views

Recent Posts

See All
bottom of page