top of page
Naat Academy Naat Lyrics Naat Channel-Naat-Lyrics-Islamic-Poetry-Naat-Education-Sufism.png

نعت کی خوشبو گھر گھر پھیلے

وہ کمالِ حُسنِ حضور ہے

Woh kamaal e husne Huzoor hay ki gumaane naqs jahaan nahin Yahi phool khaar sey door hay yahi sham’a hay ki dhoowa nahin

Do jahaan ki behtariya nahin key amaniye dil o jaan nahin Kaho kia hay woh jo yahaa nahin magar ek nahin ki woh haan nahin

Mein nisaar terey kalaam par mili yoon to kis ko zabaan nahin Woh sukhan hay jis mein sukhan na ho woh bayaan hay jiska bayaan nahin

Bakhuda Khuda ka yahi hay dar nahin aur koi mafar maqar Jo wahaan sey ho yahi aake ho jo yahaan nahin to wahaan nahin

Kare Mustafa ki ihaanatain khule bando uss pe yein jur’ate Ke mein kya nahin hoon Muhammadi? Arey haan nahin arey haan nahin

Terey aage yoon hay dabe lache foosahaa arab key bare bare Koi jaane moonh mein zubaan nahin nahin balke jism mein jaan nahin

Woh sharf key qat’a hain nisbatain wo karam key sab sey qareeb hain Koi keh do yaas o ummid sey wo kaheen nahin wo kahaan nahin

Yeh nahin key Khuld na ho neko wo nekoi ki bhee hay aabroo Magar aay Madinah ki aarzoo jise chahe to wo samaan nahin

Hay unhi key Noor sey sab ayaan hay unhi key jalwah mein sab neeha Bane subhe taabishe mehr sey rahe peshe mehr yehjaan nahin

Wahi Noor e Haqq wahi zille Rab hay unhi sey sab hay unhi ka sab Nahin unki milk mein aasmaan key zameen nahin key zamaan nahin

Wahi la makaan key makeen huwe sare arsh takht nasheen huwe Woh Nabi hay jiske hain yeh makaan woh Khuda hay jiska makaan nahin

Sare arsh par hay teri guzar dil e farsh par hay teri nazar Malakoot o malk mein koi shay nahin woh jo tujh pe ayaan nahin

Karoon terey naam pe jaan fida na has ek jaan do jahaan fida Do jahaan sey bhi nahin ji bharaa karoon kya karoro jahaan nahin

Tera qad to naadire daher hay koi misl ho to misaal dey Nahin gul key paudo mein daaliya key chaman mein saro chamaa nahin

Nahin jis key rang ka dusra na to ho koi na kabhi huwa Kaho us ko gul kahe kiya koi key gulo ka dher kahaa nahin

Karu madh e ahl e duwal Raza parey is balaa mein meri balaa Mein gadaa hun apne Kareem ka mera deen paara e naan nahin

وہ کمالِ حُسنِ حضور ہے کہ گمانِ نَقْص جہاں نہیں یہی پھول خار سے دور ہے یہی شمع ہے کہ دُھواں نہیں

دو جہاں کی بہتریاں نہیں کہ امانیٔ دل و جاں نہیں کہو کیا ہے وہ جو یہاں نہیں مگر اک ’’نہیں ‘‘ کہ وہ ہاں نہیں

میں نثار تیرے کلام پر مِلی یُوں تو کِس کو زباں نہیں وہ سخن ہے جس میں سخن نہ ہو وہ بیاں ہے جس کا بیاں نہیں

بخدا خدا کا یہی ہے در نہیں اور کوئی مَفَر مَقَر جو وہاں سے ہو یہیں آکے ہو جو یہاں نہیں تو وہاں نہیں

کرے مصطفٰی کی اِہانتیں کھلے بندوں اس پہ یہ جرأتیں کہ میں کیا نہیں ہوں مُحَمَّدِی! ارے ہاں نہیں ارے ہاں نہیں

تِرے آگے یُوں ہیں دَبے لَچے فُصَحَاعرب کے بڑے بڑے کوئی جانے منھ میں زباں نہیں، نہیں بلکہ جسم میں جاں نہیں

وہ شرف کہ قطع ہیں نسبتیں وہ کرم کہ سب سے قریب ہیں کوئی کہدو یاس و امید سے وہ کہیں نہیں وہ کہاں نہیں

یہ نہیں کہ خُلد نہ ہو نِکو وہ نِکوئی کی بھی ہے آبرو مگر اے مدینہ کی آرزو جسے چاہے تو وہ سماں نہیں

ہے اُنہیں کے نور سے سب عیاں ہے اُنہیں کے جلوہ میں سب نہاں بنے صبح تابش مہر سے رہے پیش مہر یہ جاں نہیں

وہی نورِ حق وہی ظلِّ ربّ ہے انہیں سے سب ہے انہیں کا سب نہیں ان کی مِلک میں آسماں کہ زمیں نہیں کہ زماں نہیں

وہی لامکاں کے مکیں ہوئے سرِ عرش تخت نشیں ہوئے وہ نبی ہے جس کے ہیں یہ مکاں وہ خدا ہے جس کا مکاں نہیں

سرِ عرش پر ہے تِری گزر دلِ فرش پر ہے تِری نظر ملکوت و ملک میں کوئی شے نہیں وہ جو تجھ پہ عیاں نہیں

کروں تیرے نام پہ جاں فدا نہ بس ایک جاں دو جہاں فِدا دو جہاں سے بھی نہیں جی بھرا کروں کیا کروڑوں جہاں نہیں

تِرا قد تو نادرِ دہر ہے کوئی مِثل ہو تو مِثال دے نہیں گُل کے پودوں میں ڈالیاں کہ چمن میں سرو چماں نہیں

نہیں جس کے رنگ کا دوسرا نہ تو ہو کوئی نہ کبھی ہوا کہو اس کو گل کہے کیا بنی کہ گلوں کا ڈھیر کہاں نہیں

کروں مدحِ اہلِ دُوَلْ رضاؔ پڑے اِس بَلا میں مِری بَلا میں گدا ہوں اپنے کریم کا مِرا دِین پارۂ ناں نہیں

5 views
bottom of page