top of page

نعت کی خوشبو گھر گھر پھیلے

Naat Academy Naat Lyrics Naat Channel-Naat-Lyrics-Islamic-Poetry-Naat-Education-Sufism.png

قصیدہ در بیانِ حالِ سراپاۓ سیّدِ عالم

مہرِ عنایت مطلعِ رحمت موجۂ بہجت ابر ثنا کا جلوۂ رؤیت مستئِ وحدت مجمعِ کثرت غرقِ تماشا

شکلِ ظہورِ نورِ الٰہی وصف قدیمی لَا متَناہی مظہرِ یزداں مرکزِ اِمکاں جوہرِ یکتا غایتِ اولیٰ

کلمۂ مجمل شرحِ مفصّل جانِ فروع و حکمِ مدلّل شمسیۂ اسباقِ تصوّر سُلّمِ صدق و منہجِ صدرا

نثرِ رفیع و نظمِ وسیع و معجزِ عالم حجّتِ پیہم شرح بہ صورت حاشیہ سیرت آیہ و سورت حالِ سراپا

جسمِ معطّر طاہر و اَطہر خلطِ عناصر ربطِ مکسَّر ہژدہ ہزاری بوۓ تنفّس گوشہ بہ گوشہ عنبرِ سارا

شانِ دَنیٰ ثُمَّا فَتَدَلّیٰ مرتبہ اَو اَدنیٰ ترا شاہا کرسی و اَوجِ عرشِ معلّیٰ پست بہ روۓ قامتِ زیبا

کَونی نظائر اصلِ مغائر فوقِ عقولِ ناطقہ سائر جلوۂ ذاتی ظلِّ صفاتی سایۂ پیکر نافئِ احصا

رأسِ تعالِی رشکِ معالی تاج ورِ تملیکِ خدائی اشک بہ سجدہ ، بخششِ عامہ ، دھونے کو ہے امّت کا سیاہا

پیچ و خمِ گیسوۓ حجابی” بابِ سلوک ” اشکالِ الہٰی شابِ شبِ قدر آنِ شبابی مشک ادائی دنیا بہ عقبیٰ

جلوہ بہ جلوہ تاب و تبِ رخ رتبہ بہ رتبہ پیشِ تعیّن محورِ اَمر و خَلق تمامی قبلہ شُیونِ جملۂ اسما

عارضِ روشن صفحۂ وحدت جمعِ معارف شیشہ عجائب شرحِ بیانِ آیۂ اَحسن خطِّ یَدِ بے کج رَوِ اِملا

نقشہ بنے دو آبۂ کوثر لب مَرَجَ الْبَحرین سراسر مَوج بہ مَوج اعجاز تکّلم قطرہ بہ قطرہ وَحیٌ یُّوحیٰ

خانۂ شب گوں سینۂ محزوں رشکِ ضیا و عین مفرّح وقتِ تبسّم وجہِ تکّلم نور کا دھارا بَینِ ثنایا

کنجئِ قفلِ کُن فَیَکُوں اِطلاقِ تحکّم کُلُّ شَیئٍ پیشِ زبانِ جانِ دو عالم خم بہ جبیں ہے ہستئِ اَشیا

نظمِ عبارت حسنِ بلاغت سحرِ فصاحت زورِ صداقت قلّت و کثرت حصر و مفسّر وصفِ سخن جوں دریا بہ دریا

فاتحہ مصحف زہرہ معارف لوحِ لطائف آئِنہ مِکشَف ضوءِ جبیں اِیصال و اِراءَت کر گئی روشن جادۂ اِہدا

مِکحَلِ حق دو چشم مکَحَّل نقش خطِ مَازَاغ شمائل ہست و عدم وہ گردشِ مقلہ غمزہ بہ غمزہ حشر ہویدا

علّت و حال ، اعراض و جواہر فرع بہ اصل ، اشباہ و نظائر شوخ نظر اعجازِ مجسّم شاہدِ عالَم غیب شناسا

نشترِ مژگاں نعرۂ رِنداں لطفِ جراحت شوقِ زیادت مُظہِرِ محجوباتِ بواطن کاشفِ پردہ ہاۓ معمّا

عِرقِ غضب مابینِ حواجب نقشہ جلالِ حضرتِ موحد یوں متقارب یوں متناسب قوس بہ قوس انوار کا سونا

سامعِ صَوتِ خامۂ لوح آگاہِ دہانِ پُورب و پَچّھم پیش بہ پیش اخبارِ دو عالم گوشِ ہمہ تن سیّدِ والا

بر سرِ اَقنَی العِرنَین ایسے نور کا بکّہ روشن و رقصاں شعلۂ طورِ قدس کا منظر اَوجِ لواءُالحمد کا لہرا

چاہِ زَنَخداں بوسۂ یزداں زنداں خانہ یوسفِ کنعاں خضر زلالا ، حوضِ کوثر ، بھید بھنور اسرارِ تلَلّا

لحیہ بہ وصفِ حسنِ کثاثت سبزۂ رحمت جانِ بصارت رحلِ کتابِ نورِ ہدایت خطِّ شکستِ ہر دلِ اعدا

مِثل و شبیہِ سدرہ و طُوبیٰ جَچتی نہیں اِس دُمیہ کے آگے پیش بہ جِیدِ نقرہ صفت ہے شرم سے شمعِ طور کو دھڑکا

یوں تنِ تنہا پیشِ جلالت بارِ دو عالَم سر پہ اٹھاۓ شانہ بہ شانہ شانِ شفاعت دیکھ وہ شورِ حشر کا تھمنا

قوّتِ بازو حالِ مسبّب دیدہ بہ دیدہ وصف عیانی ضرب کا پڑنا خاک میں مَل دے جزئیہ جزوِ لَا یَتَجَزّیٰ

مصرع مصرع دستِ مقدّس نظمِ الٰہی کے ہیں مخمّس لفظ میں کوثر معنی نِعائم بحر میں قاسم جُود مقفّیٰ

ثبت ہوئی وہ لوحِ معظّم آگے اَلَم نَشرَح کی وضاحت شرع اجازت دے تو کہوں یوں سینے میں علم مساوی رکھّا

لام الف کا ہے وہ تقاطع نقشہ براۓ مہر بہ خاتم نکتہ بہ نکتہ رازِ کمر ہے لَا جو خطِ تنسیخ میں اُبھرا

ہے مَلَاءِ اعلیٰ کا یہ قبلہ یا ہے ستونِ عرشِ الٰہی ساق ہے کوئی زینۂ کرسی یا پئے امکاں نخلِ تمنّا

ناخنِ دست و پا ہیں عقولِ عشرہ کی گویا شرحِ مفصّل جن کی چمک نے دانہ بہ دانہ عالَمِ فصلِ سُنبُلہ کھولا

گرد بہ گرد افلاک کا عالم سمت بہ سمت اِک حیرتِ پیہم پہنچے قدم اُس کوۓ وراء جو حدِّ تعیّن سے ہے معرّا

روکتا ہوں اب بات یہیں پر رویتِ حق ہے جائز و ممکن کوئی نہیں ہے جانِ دو عالم جس نے تجھے تفصیل میں دیکھا

پردہ بہ پردہ نور میں لپٹا تیرا وجود اے صاحبِ عالم جانِ غزل تُو شانِ قصیدہ کیا ہو بیاں ترا نقشۂِ اعضا

مدح میں تیری ظلِّ الٰہی نطقِ شکستہ کھول دیا ہے لکّھا ہے تیرے عشق میں جو کچھ آ کے دِکھا در عالمِ رویا

رازئِ دَوراں تیری قسمت تو ہے غلامِ اعلیٰحضرت تیرے سخن پر داد کی خاطر ذوقٓ لحد سے باہر نکلا

از : میرزا امجد رازی

3 views

Recent Posts

See All
bottom of page