top of page
Naat Academy Naat Lyrics Naat Channel-Naat-Lyrics-Islamic-Poetry-Naat-Education-Sufism.png

نعت کی خوشبو گھر گھر پھیلے

عظمت و توقیرِ شاہِ دو جہاںﷺ اسریٰ کی شب

عظمت و توقیرِ شاہِ دو جہاںﷺ اسریٰ کی شب دیکھتے ہی رہ گئے کون و مکاں اسریٰ کی شب

ہے مقامِ مصطفےٰ ﷺ ایسے عیاں اسریٰ کی شب فرش تا عرشِ بریں ہیں وہ ﷺ رواں اسریٰ کی شب

آن بانِ وجہِ کاف و نون ﷺکا عالم نہ پوچھ خود سے نادم تھے مکان و لامکاں اسریٰ کی شب

آۓ تھے روح الامیں لے کر پیامِ لَم یَزَل اِس سفر میں آپ ﷺ کے تھے میزباں اسریٰ کی شب

یہ بتایا حق تعالیٰ نے کہ میں ”سبحان“ ہوں آسماں کی سمت ہے خاکی رواں اسریٰ کی شب

مسجدِ حُرمت سے اڑ کر یوں گئے اقصیٰ تلک قدرتِ کامل کے دیکھے سب نشاں اسریٰ کی شب

سُرعتِ بُرَّاق سے لرزیدہ تھے ماہ و نجوم سب کے سب سیَّارگان و کہکشاں اسریٰ کی شب

گرمٸیِ رفتار مثلِ نور تھی بُرَّاق کی وقت سمٹا مثلِ بحرِ بیکراں اسریٰ کی شب

مہر ماہ و مشتری و آسماں تھے دم بخود ثابت و سیَّار کا تھا امتحاں اسریٰ کی شب

انجم و پرویں تَحیَر میں رہے اس رات بھر کون ہے اتنا زیادہ ضوفشاں اسریٰ کی شب

کھل گیا بےگنبدِ چرخِ کہن تیرے ﷺ لیے قدسیوں کے بخت جاگے ہیں وہاں اسریٰ کی شب

عود و عنبر کی فلک پر ہر طرف پھیلی مہک سج گیا گردوں مثیلِ گلسِتاں اسریٰ کی شب

وصلِ محبوب و مُحب کی آن پہنچی ہے گھڑی ہٹ گٸے جو بھی تھے پردے درمیاں اسریٰ کی شب

فخرِ موجودات ﷺ پر نازاں ہیں سب جن و بشر مصطفےٰ ﷺ ہیں جب خدا کے میہماں اسریٰ کی شب

ورطہءِ حیرت میں اب تک ہے جہانِ ہست و بود ششدر و مبہوت ہے خلقِ جہاں اسریٰ کی شب

عقلِ ناقص کی دَھری ہی رہ گیئں سب منطقیں عشق کی اک جست میں تھا آسماں اسریٰ کی شب

نکتہ چینی کے لیے ملتا نہیں نقطہ انہیں خاک بر لب دیکھیے سب ناقداں اسریٰ کی شب

فاسقانِ دشت و صحرا تھے بلا شک نامراد اور اک صدیقؓ تھا بس کامراں اسریٰ کی شب

ہستٸیِ کامل کا ہے کتنا عجب یہ معجزہ ہوگئے مجھ پر معانی مہرباں اسریٰ کی شب

قالبِ ژرفِ تخیل میں ڈھلا ہر لفظ ہے خامہءِ خالد ہے شستہ اور رواں اسریٰ کی شب

محمد خالد خان

1 view

Recent Posts

See All

شہر نبی ﷺ تیری گلیوں کا

Shehre Nabi ﷺ Teri Galiyo Ka Nakhsha Hi Kuch Aisa Hai Khuld Bhi Hai Mustaq Ziyarat Jalwa Hi Kuch Aisa Hai Dil Ko Sukun De Aankh Ko Thandak Rouza Hi Kuch Aisa Hai Farshe Zami Par Arshe Bari Ho Lagta Hi

ملتا ہے تیرے در سے زمانے کو فیض عام

ملتا ہے تیرے در سے زمانے کو فیض عام دنیا کے بادشہ بھی اسی در کے ہیں غلام تیرا غلام وہ کہ جو شاہوں کو بھیک دے نسبت نے دے دیا ہے بلندی کا وہ مقام دیکھیں گے حشر میں تری وہ شان پرجمال بے شک کرم بنائے گا ا

bottom of page