top of page

نعت کی خوشبو گھر گھر پھیلے

Naat Academy Naat Lyrics Naat Channel-Naat-Lyrics-Islamic-Poetry-Naat-Education-Sufism.png

شہر نبی ﷺ تیری گلیوں کا

Shehre Nabi ﷺ Teri Galiyo Ka Nakhsha Hi Kuch Aisa Hai Khuld Bhi Hai Mustaq Ziyarat Jalwa Hi Kuch Aisa Hai

Dil Ko Sukun De Aankh Ko Thandak Rouza Hi Kuch Aisa Hai Farshe Zami Par Arshe Bari Ho Lagta Hi Kuch Aisa Hai

Unke ﷺ Dar Par Aisa Jhuka Dil Uthne Ka Ab Hosh Nahi Ahle Shariyat Hai Sakte Me Sajda Hi Kuch Aisa Hai

Sibte Nabi Hai Pushte Nabi Par Aur Sajde Ki Haalat Hai Aqa ﷺ Ne Tasbih Bharhaii Beta Hi Kuch Aisa Hai

Rab Ke Siwa Dekha Na Kisi Ne Farshi Ho Ya Arshi Ho Unke ﷺ Haqiqat Ke Chehre Par Parda Hi Kuch Aisa Hai

Taaj Ko Apne Kaasa Banaa Kar Haazir Hain Shaahan E Jaha Unki ﷺ Ata Hi Kuch Aisi Hai Sadqa Hi Kuch Aisa Hai

Kham Hai Yaha Jhamshid O Sikandar Is Me Kya Hairani Hai Unke ﷺ Gulaamo Ka Ay Akhtar Rutba Hi Kuch Aisa Hai

Shaikhul Islam Syed Muhammad Madni Miya

شہر نبی ﷺ تیری گلیوں کا نقشہ ہی کچھ ایسا ہے خلد بھی ہے مشتاق زیارت جلوہ ہی کچھ ایسا ہے

دل کو سکوں دے آنکھ کو ٹھنڈک روضہ ہی کچھ ایسا ہے فرش زمیں پر عرش بریں ہو لگتا ہی کچھ ایسا ہے

ان ﷺ کے در پر ایسا جھکا دل اٹھنے کا اب ہوش نہیں اہل شریعت ہیں سکتے میں سجدہ ہی کچھ ایسا ہے

سبط نبی ﷺ ہے پشت نبی پر اور سجدے کی حالت ہے آقا ﷺ نے تسبیح بڑھا دی بیٹا ہی کچھ ایسا ہے

رب کے سوا دیکھا نہ کسی نے فرشی ہو یا عرشی ہو ان ﷺ کی حقیقت کے چہرے پر پردہ ہی کچھ ایسا ہے

تاج کو اپنے کاسا بنا کر حاضر ہیں شاہانِ جہاں ان ﷺ کی عطا ہی کچھ ایسی ہے صدقہ ہی کچھ ایسا ہے

خم ہیں یہاں جمشید و سکندر اس میں کیا حیرانی ہے ان ﷺ کے غلاموں کا اے اختر رتبہ ہی کچھ ایسا ہے-

شیخ الاسلام حضرت سید محمد مدنی میاں قبلہ

176 views

Recent Posts

See All

ملتا ہے تیرے در سے زمانے کو فیض عام

ملتا ہے تیرے در سے زمانے کو فیض عام دنیا کے بادشہ بھی اسی در کے ہیں غلام تیرا غلام وہ کہ جو شاہوں کو بھیک دے نسبت نے دے دیا ہے بلندی کا وہ مقام دیکھیں گے حشر میں تری وہ شان پرجمال بے شک کرم بنائے گا ا

سن لو خدا کے واسطے اپنے گدا کی عرض

سن لو خدا کے واسطے اپنے گدا کی عرض یہ عرض ہے حضور بڑے بے نوا کی عرض اُن کے گدا کے دَر پہ ہے یوں بادشاہ کی عرض جیسے ہو بادشاہ کے دَر پہ گدا کی عرض عاجز نوازیوں پہ کرم ہے تُلا ہوا وہ دل لگا کے سنتے ہیں

bottom of page