top of page

نعت کی خوشبو گھر گھر پھیلے

Naat Academy Naat Lyrics Naat Channel-Naat-Lyrics-Islamic-Poetry-Naat-Education-Sufism.png

حبیب خدا کا نظارا کروں میں

Habeeb e khuda ka nazaara karoon main Dil o jaan un par nisaara karoon main

Teri kafsh e paa yun sanwaara karoon main Ke palkon se us ko buhaara karoon main

Mujhe apni rehmat se tu apna karle Siwa tere sab se kinaara karoon main

Main kyun gair ki thokarein khaane jaun Tere dar se apna guzaara karoon main

Salaasil masaaib ke abru se kaato Kahaan tak masaaib gawaara karoon main

Khudaara ab aao ke dum hai labon par Dum e waapsi to nazaara karoon main

Tere naam par sar ko qurbaan karke Tere sar se sadqa utaara karoon main

Ye ek jaan kya hai agar hon karoron Tere naam par sab ko waara karoon main

Mujhe haath aaye agar taaj e shaahi Teri kafsh e pa par nisaara karoon main

Tera zikr lab par khuda dil ke andar Yunhi zindagaani guzaara karoon main

Dum e waapsi tak tere geet gaoon Muhammad Muhammad pukaara karoon main

Tere dar ke hote kahaan jaoon pyaare Kahaan apna daaman pasaara karoon main

Mera deen o imaan farishte jo poochhein Tumhari hi jaanib ishaara karoon main

Khuda aisi quwwat de mere qalam mein Ke badmazhabon ko sudhaara karoon main

Jo ho qalb sona to ye hai suhaga Teri yaad se dil nikhaara karoon main

Khuda ek par ho to ik par Muhammad Agar qalb apna do paara karoon main

Khuda khair se laaye wo din bhi Noori Madine ki galiyaan buhaara karoon main

Kalam : Huzoor Mufti e Aazam e Hind Alyhir Rahma

حبیب خدا کا نظارا کروں میں دل و جان ان پر نثار کروں میں

تری کفش پا یوں سنوارا کروں میں کہ پلکوں سے اس کو بہارا کروں میں

تری رحمتیں عام ہیں پھر بھی پیارے یہ صدمات فرقت سہارا کروں میں

مجھے اپنی رحمت سے تو اپنا کر لے سوا تیرے سب سے کنارا کروں میں

میں کیوں غیر کی ٹھوکریں کھانے جاؤں ترے در سے اپنا گزارا کروں میں

سلاسل مصائب کے ابرو سے کاٹو کہاں تک مصائب گوارا کروں میں

خدا را اب آؤ کہ دم ہے لبوں پر دم واپسیں تو نظارا کروں میں

ترے نام پر سر کو قربان کر کے ترے سر سے صدقہ اتارا کروں میں

یہ اک جان کیا ہے اگر ہوں کروروں ترے نام پر سب کو وارا کروں میں

مجھے ہاتھ آئے اگر تاج شاہی تری کفش پا پر نثارا کروں میں

ترا ذکر لب پر خدا دل کے اندر یونہی زندگانی گزارا کروں میں

دم واپسیں تک ترے گیت گاؤں محمد محمد پکارا کروں میں

ترے در کے ہوتے کہاں جاؤں پیارے کہاں اپنا دامن پسارا کروں میں

مرا دین و ایماں فرشتے جو پوچھیں تمہاری ہی جانب اشارا کروں میں

خدا ایسی قوت دے میرے قلم میں کہ بدمذہبوں کو سدھارا کروں میں

جو ہو قلب سونا تو یہ ہے سہاگا تری یاد سے دل نکھارا کروں میں

خدا ایک پر ہو تو اک پر محمد اگر قلب اپنا دو پارا کروں میں

خدا خیر سے لائے وہ دن بھی نورؔی مدینے کی گلیاں بہارا کروں میں

صبا ہی سے نورؔی سلام اپنا کہہ دے سوا اس کے کیا اور چارا کروں میں

کلام : حضور مفتی اعظم ہند علیہ الرحمہ

4 views

Recent Posts

See All
bottom of page