top of page

نعت کی خوشبو گھر گھر پھیلے

Naat Academy Naat Lyrics Naat Channel-Naat-Lyrics-Islamic-Poetry-Naat-Education-Sufism.png

تضمین بر قصیدۂ درودیہ

اَلْمَدْحُ لِمُحَمَّدٍ رَحْمَۃِ الِّلْعَالَمِین ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ از : میرزا امجد رازی : تضمین بر قصیدۂ درودیہ

( ا ) مَطلعِ صبحِ ھَباء تم پہ کروڑوں درود جانِ نسیمِ بَلیٰ تم پہ کروڑوں درود جلوۂ ذاتِ خدا تم پہ کروڑوں درود

کعبہ کے بَدرُ الدُّجیٰ تم پہ کروڑوں درود طیبہ کے شَمسُ الضُّحیٰ تم پہ کروڑوں درود

ساحلِ بَحرُ النِّدا تم پہ کروڑوں درود شَجرۂِ ظِلِّ لِوَا تم پہ کروڑوں درود مَرجعِ خَلقِ خدا تم پہ کروڑوں درود

شافعِ روزِ جَزا تم پہ کروڑوں درود دافعِ جملہ بَلا تم پہ کروڑوں درود

شارحِ رَمز و خِفا تم پہ کروڑوں درود قاسمِ کَنزِ ہُدیٰ تم پہ کروڑوں درود موصلِ غَیبُ العَمَا تم پہ کروڑوں درود

جان و دلِ اَصفیا تم پہ کروڑوں درود آب و گِلِ اَنبیا تم پہ کروڑوں درود

عظمتِ لَولَاک کا سَر رَکھا تاجِ بَہا جملہ نِعَم کو کِیا جانبِ دَستِ عطا وہ دَرِ دَولت کدہ خَلق کا مَرجع بَنا

لائیں تو یہ دُوسرا دَوسرا جِس کو مِلا کوشکِ عرش و دَنَیٰ تم پہ کروڑوں درود

خَمسہ اُمورِ خِفا دے دیا علمِ قضا حاضرِ رؤیت ہوا “عقدۂ غَیبَت ” کُشا پَردۂ اِجمال اُٹھا بابِ مفصَّل کھلا

اور کوئی غَیب کیا تم سے نہاں ہو بَھلا جب نہ خدا ہی چھپا تم پہ کروڑوں درود

مطلعِ وحدت نما عشرتِ کثرت ہوا عالمِ شَب تار زَا کرَّۂ رَوشن بنا پَردہ بہ پَردہ کُھلا مہرِ ضیاۓ ہدیٰ

طور پر جو شمع تھا چاند تھا ساعیر کا نَیّرِ فاراں ہوا تم پہ کروڑوں درود

سوزِشِ غم کی ہَوا چل گئی سینہ جَلا دُودِ سِیَہ حَسرتا آہوں سے اُٹھنے لگا عرصۂ آہ و بکا ختم ہو جانِ لِقا

دِل کرو ٹھنڈا مرا وہ کفِ پا چاند سا سینہ پہ رکھ دو ذرا تم پہ کروڑوں درود

( ب ) ذاتِ ہُوِیَّت مآب کے ہیں صفاتی حجاب خامہ نے مدحِ جناب میں لکھی اُمُّ الکتاب حاملِ اَوَّل خطاب قدرتِ حق کی مَناب

ذات ہوئی انتخاب وَصف ہوۓ لا جواب نام ہوا مصطفےٰ تم پہ کروڑوں درود

رونقِ بزمِ طرَب قبلۂ جانِ طلَب رُوبَرو دَستِ وَہَب جملہ عجَم اور عرَب ہاتھ بندھے با ادَب خَلق ہے جُنبِش بہ لَب

غَایت و علَّت سبَب بہرِ جہاں تم ہو سَب تم سے بَنا تم بِنا تم پہ کروڑوں درود

( ت ) مَظہَرِ اَسماۓ ذات مُظہرِ جملہ صفات رابطۂ موجبات نظم گہِ ممکنات دائرۂ شَش جہات دست درازِ مآت

تم سے جہاں کی حیات تم سے جہاں کا ثبات اَصل سے ہے ظِل بندھا تم پہ کروڑوں درود

سارے خطوطِ مکاں سطحِ مقرّر کے دوست جملہ حدوثِ زماں دَورِ مکرَّر کے دوست سب میں ہو تم ہی رَواں کہتے ہیں اندر کے دوست

مغز ہو تم اور پوست ، اور ہیں باہر کے دوست تم ہو درونِ سرا تم پہ کروڑوں درود

( ث ) بات ہماری بنے اب تو بَہَر طَور غوث عرض کناؤں پہ ہو اب نَظَرِ غَور غوث یوں رہے گا کب تلک گردشوں کا دَور غوث

کیا ہیں جو بے حد ہیں لَوث تم تو ہو غَیث اَور غَوث چھینٹے میں ہو گا بھلا تم پہ کروڑوں درود

بے دَم و قوّت غَثِیث اور ہے وقتِ کَرِیث تیغِ عَطَش سے رَثِیث ہوتا ہے دامن شَبِیث صاحبِ جودِ اَثِیث بہرِ کرم ہو بعیث

تم ہو حَفِیظ و مغیث کیا ہو وہ دشمن خبیث تم ہو تو پھر خوف کیا تم پہ کروڑوں درود

( ج ) خُلقِ مجَسَّم مزاج باعثِ صد اِبتہاج طاقِ وجودِ زجاج جاۓ وقوفِ سِراج صاحبِ حکم و رواج دیں جسے کونین باج

وہ شبِ معراج راج وہ صفِ محشر کا تاج کوئی بھی ایسا ہوا تم پہ کروڑوں درود

( ح ) نغمۂ عیشِ صباح بادِ کوۓ اِنشراح ہو گیا لطفِ نَجاح کِھل اٹھی بزمِ سِجاح حامئ نَزد و طَراح دیکھیے قلبِ لحاح

لُحْتَ فَلَاحُ الفَلَاح رُحتَ فَرَاحُ المَرَاح عُدْ لِیَعُودُ الھَنَا تم پہ کروڑوں درود

ضعف میں شکلِ سطیح ہے یہ وجودِ نَقیح جلوۂ روۓ صبیح کیجے دِکھا کے صحیح غیبِ اَزَل کے شریح قبلۂ نطقِ مدیح

جانِ جہانِ مسیح داد کہ دل ہے جریح نبضیں چھٹیں دَم چلا تم پہ کروڑوں درود

( خ ) وہ غمِ برزخ خزاں جس نے کیا دل سَلاخ جانِ بہارِ نشور دُور ہو وحشت کی تاخ جیب و گریباں کیے پھرتے ہیں ہم چاخ چاخ

اُف وہ رہِ سنگلاخ آہ یہ پا شاخ شاخ اے مرے مشکل کشا تم پہ کروڑوں درود

( د ) مشتقِ نورِ ودود مَصدرِ خَلقِ شہود مَوجِ یَمِ بے حدود نغمۂ لَولَاک رُود قضیۂ بہبود و بود اَوَّلِ تخمِ نمود

تم سے کھلا بابِ جود تم سے ہے سب کا وجود تم سے ہے سب کی بقا تم پہ کروڑوں درود

( ذ )

آیۂ جَاؤکَ سے موڑ لوں منہ ، اَلعِیاذ ہے یہ وہ دَر ہیں جہاں حرف و اجابت لواذ دافعِ قہر و غضب ہے یہی گاہِ شواذ

خستہ ہوں میں تم معاذ بستہ ہوں میں تم ملاذ آگے جو شہ کی رضا تم پہ کروڑوں درود

( ر ) خامۂ لوحِ امور رہتا ہے پیشِ حضور بدلیں جو چاہیں سطور لکّھیں جو چاہیں ضرور شافعِ یومِ نشور کیجیے غم دل سے دور

گرچہ ہیں بے حد قصور تم ہو عفوّ و غفور بخش دو جرم و خطا تم پہ کروڑوں درود

معدنِ ذھبُ الاَزَل مَقسمِ بزمِ شذور جوہرِ اعراضِ کُن قضیۂ حملِ ظہور مطلعِ موضوعِ غیب اصلِ تجلئ طور

مہرِ خدا نور نور دل سے سیہ دن ہو دور شب میں کرو چاندنا تم پہ کروڑوں درود

اپنی متاعِ عمل میں نے تو دی ہے بکھیر ہو نہ یہ قبل اَز وداع توبہ میں ہو جاۓ دیر غفلتوں کا زور ہے ہو گیا ہوں میں تو ڈھیر

تم ہو شہید و بصیر اور میں گنہ پر دلیر کھول دو چشمِ حیا تم پہ کروڑوں درود

جلوۂ جانِ نظر ہو شبِ ہجراں گزر دیدہ و قلب و جگر ہیں بِچھے آٹھوں پہَر مُلکِ خدا کے کُنوَر موڑو مہار اب اِدھر

چھینٹ تمہاری سحر چھوٹ تمہاری قمر دل میں رچا دو ضیا تم پہ کروڑوں درود

کیا کرے عقلِ جہاں بحرِ تحیُّر عبور جملہ قیاسات ہیں آبلہ پا چور چور دونوں ہیں برھانِ تام روبرو عندَ الجمہور

تم سے خدا کا ظہور اُس سے تمہارا ظہور لِمْ ہے یہ ، وہ اِنْ ہوا تم پہ کروڑوں درود

( ز ) رکھتے ہیں نسبت دَبِیز ورنہ تو ہم کیا ہیں چیز کون ہے اپنا مجِیز کون ہے اپنا معِیز جانِ ہر روشن رَمیز روحِ کتاب البَرِیز

بے ہنر و بے تمیز کس کو ہوۓ ہیں عزیز ایک تمہارے سوا تم پہ کروڑوں درود

( س ) بکھرا ہے جَمِّ اُناس سر چڑھے خوف و ہراس ہاۓ تپَش ہاۓ پیاس کوئی نہیں ہم شناس تنہا ہیں دل ہے اُداس ختم ہو شب تارِ یاس

آس ہے ، نہ کوئی پاس ایک تمہاری ہے آس ایک یہی آسرا تم پہ کروڑوں درود

( ش ) بہرِ محیطِ کَثِیب کیا بِچھا اُونچا ہے فرش رفعتیں سجدہ کناں ایسا اَوْ اَدْنَیٰ ہے فرش قبلہ ، گروہِ قدس نے یہی رکّھا ہے فرش

طارمِ اعلیٰ کا عرش جس کفِ پا کا ہے فرش آنکھوں پہ رکھ دو ذرا تم پہ کروڑوں درود

( ص ) کُھلنے سے کُھلتا نہ تھا اپنا تو انجامِ قاص اِذْھَبُوْا بن کر اُٹھا ایک مُشیرِ مناص حشر ہے غوّاص سب ذات تمہاری مغاص

کہنے کو ہیں عام و خاص ایک تمہی ہو خلاص بَند سے کردو رہا تم پہ کروڑوں درود

( ض ) بخششوں کا کون دے جرموں کے بدلے عِوَض ہم نے تو حاجات سب کی ہیں تمہیں پر عَرَض اے کہ طبیبِ ذنوب پیش ہے کارِ حرَض

تم ہو شفاۓ مرَض خَلقِ خدا خود غرَض خَلق کی حاجت بھی کیا تم پہ کروڑوں درود

( ط ) عاصیوں سے ارتباط بخشتا ہے انبساط کھول دے بابِ رباط ساقئ جامِ نشاط ہاۓ غضب انحطاط قہر کے ہم ہیں محاط

آہ وہ راہِ صراط بندوں کی کتنی بساط المدد اے رہنما تم پہ کروڑوں درود

( ظ ) زندگی کیسی رہی ، نقشۂ خبث و غلاظ یوں رہا آوارہ فکر ، جوں کوئی فردِ عکاظ دیکھی نہ راہِ ھدیٰ تھک گئے شیخ و وعاظ

بے ادب و بے لحاظ کر نہ سکا کچھ حفاظ عفو پہ بھولا رہا تم پہ کروڑوں درود

( ع ) شور سے بربادِ سمع آنکھ میں طوفانِ دمع عیشِ بہاراں کی طمع بلبلیں ہیں رقصِ رمع بر گلِ پژمردہ ومع ہو خزاں کا قلع و قمع

لو تہِ دامن کہ شمع جھونکوں میں ہے روزِ جمع آندھیوں سے حشر اٹھا تم پہ کروڑوں درود

( غ ) موجۂ عودِ جمال کر دے معطّر دماغ اے خنک ریزئ قدس حَبس سے دے دے فراغ معجزے دِکھلا تو وہ جَل اُٹھیں دل کے چراغ

سینہ کہ ہے داغ داغ کہہ دو کرے باغ باغ طیبہ سے آ کر صبا تم پہ کروڑوں درود

( ف ) جملہ مخالف ہوۓ لشکرِ غم مؤتلف چشمِ کرم کیجیے بہرِ مدد منعطف حالِ دلِ روسیاہ ہے تمہیں پر منکشف

گیسو و قد لام الف کردو بَلا منصرف لا کے تہِ تیغِ لَا تم پہ کروڑوں درود

( ق ) ہو گیا مولد بحق چمکے طبَق در طبَق مِٹ گئے رنج و قلَق جانوں میں آئی رمَق چہرے عدوّوں کے فق سینے حسودوں کے شق

تم نے برنگِ فلق جیبِ جہاں کر کے شق نور کا تڑکا کیا تم پہ کروڑوں درود

( ک ) سب ہے تمہاری چمک سب ہے تمہاری دمک سب ہے تمہاری جھلک سب ہے تمہاری مہک مِلک سے تقسیم تک ہے تو تمہارا درَک

نوبتِ در ہیں فلک خادمِ در ہیں ملک تم ہو جہاں بادشا تم پہ کروڑوں درود

( ل ) ذاتِ قِدَم کی دلیل جوہرِ نافی مثیل صاحبِ نطقِ جزیل بے ترش و بے غصیل دستِ عطاۓ طویل جانبِ سائل یمیل

خِلق تمہاری جمیل خُلق تمہارا جلیل خَلق تمہاری گدا تم پہ کروڑوں درود

( م ) مرجعِ ہر خاص و عام قاسمِ لطفِ دوام قبلۂ کاس المرام خیرِ جہانِ اَنام صاحبِ اسریٰ خرام فردِ اَوْ اَدنَیٰ مقام

طیبہ کے ماہِ تمام جملہ رسل کے امام نوشۂ ملکِ خدا تم پہ کروڑوں درود

تم سے مکانوں کا نام تم سے مکینوں کو کام تم سے حدوث و قیام تم سے سکوت و کلام تم سے چمن مشک فام تم سے ہی گردش میں جام

تم سے جہاں کا نظام تم پہ کروڑوں سلام تم پہ کروڑوں ثنا تم پہ کروڑوں درود

مظہرِ ذاتِ قدیم صاحبِ لطفِ عمیم تم ہو خبیر و علیم تم ہو عظیم و حشیم تم ہو شفیع و نعیم تم ہو حلیم و قسیم

تم ہو جواد و کریم تم ہو رؤوف و رحیم بھیک ہو داتا عطا تم پہ کروڑوں درود

اَمر کے ناظم ہو تم ہست کے لازم ہو تم اَوَّل و خاتم ہو تم ثابت و قائم ہو تم مفخَرِ ہاشم ہو تم نقص سے سالم ہو تم

خَلق کے حاکم ہو تم رزق کے قاسم ہو تم تم سے ملا جو ملا تم پہ کروڑوں درود

جامع و مانع ہو تم شائع و ذائع ہو تم واضع و شارع ہو تم طالع و واقع ہو تم قانع و واسع ہو تم باصر و سامع ہو تم

نافع و دافع ہو تم شافع و رافع ہو تم تم سے بس افزوں خدا تم پہ کروڑوں درود

ہادی و داعی ہو تم حامی و نامی ہو تم آلی و والی ہو تم حاوی و باقی ہو تم آمر و ناہی ہو تم رازِ الہی ہو تم

شافی و نافی ہو تم کافی و وافی ہو تم درد کو کر دو دوا تم پہ کروڑوں درود

حشر کی جملہ عوام مع تمامی امام دیکھتی ہے گام گام لاۓ بھی کوئی پیام اُمّتِ احمد کے نام آتا ہے اَوَّل سلام

جائیں نہ جب تک غلام خلد ہے سب پر حرام ملک تو ہے آپ کا تم پہ کروڑوں سلام

( ن ) یوسفِ ہر انجمن خوش ادا خوش پیرہن بہرِ طلب موجزن ہے مرا بحرِ سخن باغِ عدن ہو بدن مہکیں گل و نسترن

برسے کرم کی بھرن پھولیں نِعَم کے چمن ایسی چلا دو ہوا تم پہ کروڑوں درود

ایک طرف ملحدین ایک طرف مفسدین ایک طرف مفترین ایک طرف شاتمین بندئ دیوِ لعین عظمتوں کے منکرین

ایک طرف اعداۓ دین ایک طرف حاسدین بندہ ہے تنہا شہا تم پہ کروڑوں درود

تھے کہاں صادق اَمین تھے کہاں اہلِ یمین خَلق میں تھے بد ترین غیظ و غضب کے قرین آسماں تھا قہر چِین تنگ تھی ہم پر زمین

گندے نکمے کمین مہنگے ہوں کوڑی کے تین کون ہمیں پالتا تم پہ کروڑوں درود

( ں ) مُخبَرِ حق ہو تمہیں مُخبِرِ حق ہو تمہیں مُبصَرِ حق ہو تمہیں مُبصِرِ حق ہو تمہیں مَشجَرِ حق ہو تمہیں مُثمِرِ حق ہو تمہیں

مَظہَرِ حق ہو تمہیں مُظہِرِ حق ہو تمہیں تم میں ہے ظاہر خدا تم پہ کروڑوں درود

جانِ وجودِ جہاں روحِ مکان و زماں قلعۂ اہلِ اَماں قبلۂ جملہ شہاں ساقئ دریا رواں حامئ تشنہ لباں

زدرُدۂ نارساں تکیہ گہِ بے کساں بادشہِ ماورا تم پہ کروڑوں درود

مانتا ہوں خَس ہوں میں کب بھلا پارَس ہوں میں جیسا بھی ناکَس ہوں میں جیسا بھی مَعطَس ہوں میں جیسا بھی اَفلَس ہوں میں آپ کا ازبس ہوں میں

کیوں کہوں بے بس ہوں میں کیوں کہوں بے کس ہوں میں تم ہو میں تم پر فدا تم پہ کروڑوں درود

تھے نہ نظر کے کہیں تھے نہ خبر کے کہیں تھے نہ ہنر کے کہیں تھے نہ نگر کے کہیں تھے نہ اِدھر کے کہیں تھے نہ اُدھر کے کہیں

باٹ نہ در کے کہیں گھاٹ نہ گھر کے کہیں ایسے تمہیں پالنا تم پہ کروڑوں درود

( ؤ ) ایسوں کو تم خود بلاؤ چادرِ رحمت اڑھاؤ ایسوں کو سینے لگاؤ ایسوں کو ہنس کر ہنساؤ آگ سے اِن کو بچاؤ ایسوں کو مژدے سناؤ

ایسوں کو نعمت کھلاؤ دودھ کے شربت پلاؤ ایسوں کو ایسی غذا تم پہ کروڑوں درود

( و ) پشت پناہی کرو ڈھال ہماری بنو غم بھی ہمارے سہو دم بھی ہمارا بھرو عیب ہمارے ڈھکو بہرِ شفاعت اٹھو

گرنے کو ہوں روک لو غوطہ لگے ہاتھ دو ایسوں پہ ایسی عطا تم پہ کروڑوں درود

سجدۂ بخشش وہ ہو خود خدا کہہ دے اٹھو میرے حبیب اب نہ رو دوں گا وہ مانگو گے جو جانبِ کرسی بڑھو عفو نہ کہتے تھکو

اپنے خطاواروں کو اپنے ہی دامن میں لو کون کرے یہ بھلا تم پہ کروڑوں درود

( ہ ) نامے ہمارے سیاہ اور ہے حالِ تباہ تم پہ جماۓ نگاہ دیکھیں تمہاری ہی راہ پیکرِ نورِ الٰہ جملہ جہاں کے گواہ

کر کے تمہارے گناہ مانگیں تمہاری پناہ تم کہو دامن میں آ تم پہ کروڑوں درود

ہو وہ غضب کی نگاہ تا بہ ابد اِن پہ شاہ گرد ہوں یہ راہ راہ چہرے ہو جائیں سیاہ ذِلَّتیں ہوں گاہ گاہ اور نہ ہو جاۓ پناہ

کر دو عدو کو تباہ حاسدوں کو روبراہ اہلِ ولا کا بھلا تم پہ کروڑوں درود

( ی ) ہم نے جفا میں نہ کی تم نے وفا میں نہ کی ہم نے دغا میں نہ کی تم نے دعا میں نہ کی ہم نے سزا میں نہ کی تم نے جزا میں نہ کی

ہم نے خطا میں نہ کی تم نے عطا میں نہ کی کوئی کمی سرورا تم پہ کروڑوں درود

( ے ) غفلتوں کے سلسلے آخری دم تک چلے نفس کے ہاتھوں بِکے کیسی بلا میں پھنسے کچھ عمل ایسے نہ تھے جن پہ تقاضا رہے

کام غضب کے کیے اس پہ ہے سرکار سے بندوں کو چشمِ رضا تم پہ کروڑوں درود

درد دوا کیجیے مجھ کو شفا دیجیے غم سے رِہا کیجیے عیشِ بقا دیجیے سہل قضا کیجیے پردہ اٹھا دیجیے

آنکھ عطا کیجیے اس میں ضیا دیجیے جلوہ قریب آ گیا تم پہ کروڑوں درود

دل میں یہ حسرت لیے ہاتھ ہیں پھیلا دیے یوں نہ غمِ حشر سے آپ کا رازیٓ مرے جب بھی زمانہ پڑھے یوں مرے حق میں کہے

کام وہ لے لیجیے تم کو جو راضی کرے ٹھیک ہو نامِ رضا تم پہ کروڑوں درود

از : میرزا امجد رازی

33 views

Recent Posts

See All
bottom of page