top of page

نعت کی خوشبو گھر گھر پھیلے

Naat Academy Naat Lyrics Naat Channel-Naat-Lyrics-Islamic-Poetry-Naat-Education-Sufism.png

اے واقفِ رموزِ حقیقت، کرم کرم

اے واقفِ رموزِ حقیقت، کرم کرم تقدیس و آبروئے نبوت، کرم کرم

آثارِ حرفِ نو کی بلاغت، کرم کرم ابوابِ زندگی کی وضاحت، کرم کرم

اے نورِ اجتہاد و بصیرت، کرم کرم غارِ حرا کی سطوت و شوکت، کرم کرم

انوارِ روز و شب کی وجاہت، کرم کرم ہر دَور کی شدید ضرورت، کرم کرم

گنج شعور و معدنِ حکمت، کرم کرم اقلیمِ جان و دل کی حکومت، کرم کرم

توحید کے گلاب کی ندرت، کرم کرم قرآں کی جیتی جاگتی صورت، کرم کرم

اے مرکزِ یقین و اصابت، کرم کرم اے تاجدارِ بزمِ رسالت، کرم کرم

لوح و قلم کی عصمت و عفت، کرم کرم نطق و بیاں کے حسنِ جلالت، کرم کرم

کون و مکاں میں حاصلِ قدرت، کرم کرم اے منبعِ خلوص و مروت، کرم کرم

ارض و سما ہیں آپﷺ کے قدمین کا غبار مقصود و منتہائے مشیّت، کرم کرم

ہر ساعتِ عزیز کے لب پر درود ہے اے روحِ عصر، جانِ قدامت، کرم کرم

اوراقِ ماہ و سال کے عنواں مرا سلام دونوں جہاں کی جانِ خطابت، کرم کرم

امن و سلامتی کے علمدار مرحبا! تا حشر عافیت کی ضمانت، کرم کرم

بے مثل و بے نظیر کہوں بھی تو کیا کہوں اے آبروئے خلوت و جلوت، کرم کرم

محشر کے دن بھی قافلہ سالار السّلام ہر عہدِ زندگی کی قیادت، کرم کرم

ایمان اور یقین کے بحرِ جمود میں جولانی و تموّجِ راحت، کرم کرم

ہر سمت بُت پرستی کی شکلیں نئی نئی برہانِ عشق و تابشِ وحدت، کرم کرم

انسان مبتلا ہے نفاق و فساد میں اے صاحبِ کمالِ امامت، کرم کرم

اُجڑی ہوئی ہے مانگ ہر اک رہگذار کی زیبائشِ حیات کی نزہت، کرم کرم

پرچم کھلے ہوئے ہیں لہو کے چہار سمت وجۂ سکون، شافعِ اُمّت، کرم کرم

جھلسا رہی ہے زر کی تمازت شعور کو ننگے سروں پہ سایۂ شفقت، کرم کرم

اب نفرتوں کی آگ ہے چاروں طرف محیط اے آیۂ خلوص و محبت، کرم کرم

انساں ہے سال خوردہ کتابوں کا خوشہ چیں اے مخزنِ حروفِ صداقت، کرم کرم

دوزخ بنی ہوئی ہے غلاموں کی زندگی اے مہربان! والیٔ جنت، کرم کرم

میزانِ عدل اپنے تقدس کی سرد لاش انسانیت کی صبحِ سعادت، کرم کرم

آماج گہ ہے بانجھ خیالوں کا ہر نصاب اے شہرِ علم، اصلِ ثقافت، کرم کرم

یہ حریت کے نام کی تذلیل الاماں سلطانِ ملکِ عزم و شجاعت، کرم کرم

پژمردگی چمن پہ مسلط ہے ان دنوں اے خوشبوئے ازل کی لطافت، کرم کرم

خود ساختہ نصاب کو رائج کرے بشر اے مخزنِ جمالِ شریعت، کرم کرم

زندہ نہیں ہے پھول کھلانے کی رسم اب اے جاں نوازِ ودایٔ نکہت، کرم کرم

رسماً حروف لب پہ سجائے تو کیا ہوا خلدِ گداز و عطرِ عبادت، کرم کرم

طیبہ کی گھاٹیوں سے گھٹا جھوم کر اٹھے عفو و کرم کے پیکرِ رحمت، کرم کرم

۔۔۔ـ۔۔۔۔۔ـ۔۔۔۔۔۔

تشنہ زمیں بدن کی پکارے مدد مدد جود و عطا کے ابرِ سخاوت، کرم کرم

اپنے غلام زادوں کے احوال پر نظر بخشش کی در گزر کی طبیعت، کرم کرم

سالارِ نسلِ آدمِ خاکی، رہِ نجات عرشِ بریں کی رونق و زینت، کرم کرم

تنہا کھڑا ہوں خون کے پیاسوں کے درمیاں ہر پل جوازِ مرجعِ خلقت، کرم کرم

مَیں ہوں حصارِ ظلمتِ شب کی فصیل پر تابانیٔ حریمِ شفاعت، کرم کرم

اﷲ کے بعد آپ ﷺ کا ہے نام سر بلند اے انتہائے عظمت و رفعت، کرم کرم

شاداب ساعتوں کا مرے گھر میں بھی نزول تاریکیوں میں نورِ معیشت، کرم کرم

افلاس کی گرفت میں ہے آپ ﷺ کا ریاضؔ اس بے نوائے شہر کی ثروت، کرم کرم

ریاض حسین چودھری رَحْمَۃُاللہ عَلَیْہ

12 views

Recent Posts

See All

شہر نبی ﷺ تیری گلیوں کا

Shehre Nabi ﷺ Teri Galiyo Ka Nakhsha Hi Kuch Aisa Hai Khuld Bhi Hai Mustaq Ziyarat Jalwa Hi Kuch Aisa Hai Dil Ko Sukun De Aankh Ko Thandak Rouza Hi Kuch Aisa Hai Farshe Zami Par Arshe Bari Ho Lagta Hi

ملتا ہے تیرے در سے زمانے کو فیض عام

ملتا ہے تیرے در سے زمانے کو فیض عام دنیا کے بادشہ بھی اسی در کے ہیں غلام تیرا غلام وہ کہ جو شاہوں کو بھیک دے نسبت نے دے دیا ہے بلندی کا وہ مقام دیکھیں گے حشر میں تری وہ شان پرجمال بے شک کرم بنائے گا ا

bottom of page