top of page
Naat Academy Naat Lyrics Naat Channel-Naat-Lyrics-Islamic-Poetry-Naat-Education-Sufism.png

نعت کی خوشبو گھر گھر پھیلے

احمد رضا کا تازہ گلستاں ہے آج بھی

Ahmad Raza ka taza gulistan hai aaj bhi Khursheed ‘ilm un ka darakhshaan hai aaj bhi

‘arsah hua woh mard e mujaahid chalaa gayaa sunniyon main aik sozish e pinhaan hai aaj bhi

imaan paa rahaa hai halaawat ki naematein aur kufr tere naam se larzaan hai aaj bhi

kis tarah itne ‘ilm ke daryaa bahaa deyee ‘ulamaa e haq ki ‘aql to hayraan hai aaj bhi

maghmum ahl e ‘ilm nah hon kyun tere liye jab ‘ilm khud hi sar bagareeban hai aaj bhi

sab unke jalne walon ke ghu ho gaye chiraagh Ahmad Raza ki sham’a farozaan hai aaj bhi

‘ishq e Habib e Paak mein dubaa hua kalaam sarmaayah nishaat sukhandaan hai aaj bhi

bhar di diloun mein ulfat o ‘azmat Rasul ki jo makhzan e halaawat e imaan hai aaj bhi

tum kya gaye ke rawnaq e mehfil chali gayei sh’er o adab ki zulf e pareshaan hai aaj bhi

‘aalim ki mawt kehte hain ‘aalam ki mawt hai apne kiye peh mawt pasheeman hai aaj bhi

wabastagaan kyun hon pareeshaan un peh jab lutf o karam unka damaan hai aaj bhi

lillah apne faiz se ab kaam lejiye fitnoun ke sar uthaane kaa imkaan hai aaj bhi

Taibah main us ki zaat salaamat rahe keh jo teri amaanatoun kaa nighehbaan hai aaj bhi

Mirza sare niyaaz jhukaataa hai is liyee ‘ilm o ‘amal peh aap ka ihsaan hai aaj bhi

احمد رضا کا تازہ گلستاں ہے آج بھی خورشیدِ علم ان کا درخشاں ہے آج بھی

عرصہ ہُوا وہ مردِ مجاہد چلا گیا سینوں میں ایک سوزشِ پنہاں ہے آج بھی

ایمان پا رہا ہے حلاوت کی نعمتیں اور کفر تیرے نام سے لرزاں ہے آج بھی

سب ان سے جلنے والوں کے گل ہوگئے چراغ امام احمد رضا کی شمع فروزاں ہے آج بھی

عالِم کی موت کہتے ہیں عالَم کی موت ہے عالَم جبھی تو سارا پریشاں ہے آج بھی

عشقِ حبیبِ پاک میں ڈوبا ہُوا کلام سرمایہِ نشاطِ سخن داں ہے آج بھی

تم کیا گئے کہ رونقِ محفل چلی گئی شعر و ادب کی زلف پریشاں ہے آج بھی

بعدِ وصال عشقِ نبی کم نہیں ہُوا روحِ رضا حضور پہ قرباں ہے آج بھی

بھر دی دلوں میں الفت و عظمت رسول کی جو مخزنِ حلاوتِ ایماں ہے آج بھی

جو علم کا خزینہ کتابوں میں ہے تری ناموسِ مصطفٰی کا وہ نگراں ہے آج بھی

خدمت قرآنِ پاک کی وہ لاجواب کی راضی رضا سے صاحبِ قرآں ہے آج بھی

للّہ! اپنے فیض سے اب کام لیجئے فتنوں کے سر اٹھانے کا امکاں ہے آج بھی

وابستگان کیوں ہوں پریشان ان پہ جب لطف و کرم کا آپ کے داماں ہے آج بھی

مرزؔا سرِ نیاز جھکاتا ہے اس لئے علم و عمل پہ آپ کا احساں ہے آج بھی

66 views
bottom of page